عمامہ باندھ کر نماز جمعہ پڑھنے کی فضیلت

عمامہ باندھ کر نماز جمعہ پڑھنے کی فضیلت

عمامہ باندھنا نبی کریم ﷺ سے عملاً باسند صحیح ثابت ہے۔ احادیث کے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے کہ رسول اللہﷺ اپنے سر پر عمامہ (پگڑی) باندھا کرتے تھے اور آپ ﷺ کے عمامہ کا رنگ سیاہ تھا۔ لیکن عمامہ کی فضیلت اور اسے پہننے کی ترغیب سے متعلق بہت سی ضعیف اور من گھڑت روایات ہمارے معاشرے میں عام ہیں، جن میں سے ایک روایت حسب ذیل ہے:

جمعہ کے دن عمامہ باندھنے والوں پر اللہ کی رحمت

ان اللہ وملائکة یصلون علی اصحاب العمائم یوم الجمعة
 جمعہ کے روز پگڑی باندھنے والوں پر اللہ تعالیٰ رحمت کرتا ہے اور اس کے فرشتے دعائیں کرتے ہیں

(طبرانی۔ عن ابی الدرداء رضی اللہ عنہ)

موضوع (من گھڑت): یہ روایت موضوع و من گھڑت ہے؛

۱: اس کی سند میں ایک راوی ایوب بن مدرک ہے، جس کے متعلق میزان الاعتدال اور لسان المیزان میں ہے کہ وہ کذاب راوی ہے؛

٭  امام یحیٰ بن معین رحمہ اللہ نے اسے ”کذاب“،

٭  امام ابو حاتم الرازی رحمہ اللہ، امام نسائی رحمہ اللہ اور امام دارقطنی رحمہ اللہ نے ”متروک“،

٭  امام ابو زرعہ الرازی، امام یعقوب بن سفیان جوزجانی، امام صالح بن محمد جزرہ اور امام ابن عدی رحمہمااللہ وغیرہم نے ”ضعیف“  کہا ہے۔

٭ امام ابن حبان رحمہ اللہ فرماتے ہیں: ” ایوب بن مدرک نے امام مکحول سے ایک من گھڑت نسخہ روایت کیا ہے، ان کو دیکھا نہیں۔“ (لسان المیزان لابن حجر: ۴۸۸/۱)

٭  ابن الجوزی رحمہ اللہ نے بھی اس روایت کو موضوعات میں ذکر کیا او رلکھا کہ اس کی کوئی اصل نہیں۔

٭  نیز اس کے بیان کرنے میں ایوب متفرد ہے، جس کے متعلق ازدی لکھتے ہیں کہ یہ روایت اس کی خود ساختہ ہے۔ دیکھئے فیض القدیر(۲۷۰/۲)

فائدہ:

٭ علامہ سخاوی تو یوں فرماتے ہیں کہ:

”پگڑی کی فضیلت کے متعلق جتنی بھی احادیث آئی ہیں، وہ سب ضعیف ہیں۔“ حوالہ

٭ ابن الدیبع شیبانی رحمہ اللہ لکھتے ہیں:

وردمعناہ بألفاظ مختلفة و کله ضعیف
”فضیلت عمامہ کی روایات مختلف الفاظ سے روایت ہوئی ہیں اور سب ضعیف ہیں“

(تمییز الطیب من الخبیث فیما یدور علیٰ ألسنۃ الناس من الحدیث، ص: ۱۰۷)

٭ فاضل محقق علامہ عبدالرحمٰن مبارکپوری رحمہ اللہ لکھتے ہیں:

لم أجد في فضل العمامة حدیثا مرفوعا صحیحا وکل ماجاء فيه فھي إما ضعیفة أو موضوعة
”مجھے عمامہ کی فضیلت میں کوئی صحیح مرفوع حدیث نہیں ملی او رجو روایات اس بارہ میں ہیں وہ یا تو ضعیف ہیں یا موضوع“

(تحفۃ الاحوذی:۵۰/۳)

Related Posts
Leave a reply
Captcha Click on image to update the captcha .