• Home
  • ائمہ اور اسلاف
  • امام ابو حنیفہ اس امت کے چراغ ہیں اور امام شافعی ابلیس سے بھی زیادہ نقصان دہ!
امام ابو حنیفہ اس امت کے چراغ ہیں

امام ابو حنیفہ اس امت کے چراغ ہیں اور امام شافعی ابلیس سے بھی زیادہ نقصان دہ!

امام اعظم محمد رسول اللہ ﷺ کی احادیثِ مبارکہ ہوں یا آپ ﷺ کے فضائل و مناقب ، صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے آثار ہوں یا ان ہستیوں کے فضائل و مناقب ہوں، صرف صحیح اور حسن رویات پیش کرنی چاہئیں۔ ضعیف و مردود ، جھوٹی، بے سند و بے اصل روایات سے کلی طور پر اجتناب کرنا چاہیے۔

اسی طرح تابعین کرام ، محدثین عظام، ائمہ و فقہا جیسے امام ابو حنیفہ یا امام مالک، امام شافعی، امام احمد اور امام بخاری رحمہم اللہ کے فضائل اور تذکرہ ہوں۔ صرف صحیح و حسن لذاتہ روایات پیش کرنی چاہئیں اور ضعیف، مردود و بے سند روایات سے کیلتاً اجتناب کرنا چاہئے۔

ابو حنیفة سراج أمتی
(امام ابو حنیفہ امت کے چراغ ہیں)

امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کی فضیلت میں اکثر ایک روایت عوام میں بغیر تحقیق کے پھیلائی جاتی ہے جو کہ نبی کریم ﷺ کی طرف جھوٹی منسوب کی گئی ہے۔ اس روایت کی تحقیق درج ذیل ہے۔

يكون في أمتي رجل يقال له محمد بن إدريس أضر على أمتي من إبليس، ويكون في أمتي رجل يقال له أبو حنيفة هو سراج أمتي
” میری امت میں ایک آدمی ہوگا جس کا نام محمد بن ادریس (یعنی امام شافعی) ہوگا، وہ میری امت کیلئے ابلیس سے بھی زیادہ نقصان دہ ہوگا۔ اور میری امت میں ایک آدمی ابو حنیفہ نامی ہوگا، وہ میری امت کا چراغ ہوگا۔ “

موضوع (من گھڑت):  یہ جھوٹی اور من گھڑت روایت ہے؛

*  امام ابن جوزی نے اسے موضوعات میں ذکر کیا ہے(الموضوعات: ۴۳/۱)

* علامہشوکانی رحمہ اللہ نے فرمایا ہے کہ: ” یہ ایسا جھوٹ ہے جس کا بطلان محتاج بیان نہیں۔“ (الفوائد المجموعۃ.ص۴۲۰)

* علامہ سیوطی رحمہ اللہ نے فرمایا ہے کہ: ”یہ روایت موضوع ہے اور اسے مامون یا جویباری نے وضع کیا ہے.“ (اللائی المصنوعۃ فی الاحادیث الموضوعۃ.۴۱۷/۱)

* شیخ البانی رحمہ اللہ نے بھی اسے روایت کو موضوع (من گھڑت) قرار دیا ہے۔ (سلسلۃ الأحاديث الضعيفۃ والموضوعۃ: ۵۷۰)

 

یہ تھی وہ روایت جو فضائل امام ابو حنیفہ کے سلسلے میں عام طور پر پیش کی جاتی ہے۔ اس روایت میں صرف امام ابو حنیفہ کی فضیلت کا ذکر نہیں بلکہ معاذ اللہ امام شافعی رحمہ اللہ کو ابلیس سے بھی زیادہ نقصان دہ قرا ر دے کر ان کی تنقیص کی گئی ہے۔ 

عوام کو چاہیے اس طرح کی جھوٹی اور من گھڑت روایات کو آگے پھیلانے سے پہلے ایک بار تحقیق ضرور کرنی چاہیے کہ آیا یہ روایات صحیح ہیں یا نہیں۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ آپ بھی کہیں اللہ کے رسول ﷺ کی سخت وعیدکے مستحق نہ ٹھریں۔ 

کیونکہ رسول اللہ ﷺ کا فرمان ہے:

”مجھ پر جھوٹ مت بولو ۔ کیونکہ جو مجھ پر جھوٹ باندھے وہ دوزخ میں داخل ہو “۔ (صحیح بخاری: ۱۰۶)

امام ابو حنیفہ کے فضائل و مناقب

امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے جو فضائل صحیح سندوں سے ثابت ہوں صرف وہ بیان کرنے چاہئیں، مثلاً:

* امام یزید بن ہارون رحمہ اللہ نے فرمایا: ”میں نے لوگوں کو دیکھا تو ابو حنیفہ سے زیادہ عقل والا، افضل اور پرہیزگار کوئی نہیں دیکھا۔ “ (تہذیب الکمال قلمی: ج۳ص۱۴۱۷

*امام ابو داود رحمہ اللہ نے فرمایا:” اللہ تعالیٰ ابو حنیفہ پر رحم کرے، وہ امام تھے۔“ (الانتقاء لابن عبد البر: ص ۳۲)

LEAVE YOUR COMMENTS